364

مرکزی امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ برماں کے مسلمانوں کے قتل عام پر عالم اسلام کی سوالیہ خاموشی لمحہ فکریہ ہے

مرکزی امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ برماں کے مسلمانوں کے قتل عام پر عالم اسلام کی سوالیہ خاموشی لمحہ فکریہ ہے , تحصیل منڈا میں عید ملن پارٹی کے شرکاء سے خطاب کرتے ہویے انہوں نے کہا کہ انسانی حقوق کے نام پر واویلا مچھانے والی تنظیمیں خاموش کیو ہیں انہوں نے اقوام متحدہ , ارگنائزیشن اسلامک کنٹری نوٹس لینے کا مطالبہ کیا اور اسلامی اتحادی فوج اور اس کے پاکستانی سپہ سالار جنرل راحیل سمیت تمام عالم اسلام سے مطالبہ کیا کہ فوری طور پر برماں اور ان کے ہمایتی ممالک کے سفیروں کو ملک بدر کیا جایے , عید ملن پارٹی کے شرکاء سے خطاب کرتے ہویے انہوں نے کہا کہ کچھ عناصر آئین سے62 اور 63 آرٹیکل خزف کرنے کی کوشش کر رہے ہیں جس کی پر زور مخالفت کرتے ہیں , انہوں نے کہا کہ 62 اور63 کو آرمی , بیوروکریسی اور تمام سیاست دانوں پر نافذ العمل کیا جایے تاکہ پاکستان کے بھگ ڈور اہل لوگوں کے ہاتھ میں چلا جایے , انہوں نے مرکزی حکومت سے مطالبہ کیا کہ سی پیک کے تحت منظور شدہ ریلوے لاین اور روڈ جاپان اور چین کے سروے کے عین مطابق ملاکنڈ ڈویژن سے گذارا جایے , انہوں نے کہا کہ ایسا ہونے سے تاجکستان اور اور چترال بھی مستفید ہونگے, انہوں نے کہا کہ سی پیک روٹ واخان کے راستے تاجکستان سے گذار کر چترال اور دیر کے روٹ پر لایا جایے , اس موقع پر انہوں نے 7 ستمبر کو برماں میں ہونے والے مظالم کے خلاف احتجاج اور 11 ستمبر کو کرپشن کے خلاف لاہور سے مارچ شروع کر کے ملک بھر میں تحریک چلانے کا اعلان کیا , انہوں نے کہا کہ پانامہ کیس میں جن افراد کے نام ہیں سب کے خلاف کاروائی کہ جایے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں